P. 1
بیدِل کہاں ہے

بیدِل کہاں ہے

|Views: 5|Likes:
منشور بواسطةAli Imran Amir

More info:

Published by: Ali Imran Amir on Feb 12, 2013
حقوق الطبع:Attribution Non-commercial

Availability:

Read on Scribd mobile: iPhone, iPad and Android.
download as DOCX, PDF or read online from Scribd
See more
See less

08/01/2015

pdf

text

original

‫بیدل کہبں ہے، داغ کہبں اوز جگس کہبں‬ ‫ِ‬ ‫ِ‬ ‫’’ عبلن هیں تُجھ سے الکھ

سہی، تو هگس کہبں ’’‬ ‫هبضی کب ایک شہس اذیت ہے زوبسو‬ ‫ِ‬ ‫الیب ہے کھینچ کس یہ دل بے خبس کہبں‬ ‫ِ‬ ‫اے ہجس هجھ سے هلنب هالنب ہے کیب تُجھے‬ ‫ِ ِ‬ ‫ُ‬ ‫هجھ بے ہنس کے دست تہی هیں ہُنس کہبں‬ ‫ِ‬ ‫ُ‬ ‫لے دے کے صسف دشت ہویں زاس ہے هیبں‬ ‫صحسا کی وسعتوں سے، جُنوں کو، حرز کہبں‬ ‫ُ‬ ‫هیں اپنی زہبسی هیں اُسے ڈھونڈتب پِھسوں‬ ‫کیب جبنے کھو گیب ہے هسا زاہبس کہبں‬ ‫اِسکب تو کھیل ہے یہ سالسل سے کھیلنب‬ ‫وحشی کو ہو سکے ہے کسی سے ضسز کہبں‬ ‫ِ‬ ‫ِ ُ‬ ‫هدت ہوئی کہ دست دعب ہیں اُٹھے ہوئے‬ ‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫زکھتے سنبھبل کس یہ دعب کب ہُنس کہبں‬

‫یہ سوچ کس لزز سب گیب ہوں هیں دوستو‬ ‫ٓ‬ ‫جبتے ہیں اندھیوں هیں پسندوں کے گھس کہبں‬

‫وہ چل دیے تو پھس ہو اُجبلوں کی کیب نوید‬ ‫ٓ‬ ‫وہ اگئے تو پھس ہے اندھیسوں کب ڈز کہبں‬ ‫ٓ‬ ‫اوازگی کہے ہے ہس اک گبم پس ہویں‬ ‫زہیے کہیں پہ گھس کے عالوہ، هگس کہبں‬ ‫عبهس تُو اُڑ زہب ہے اگسچہ ہوائوں هیں‬ ‫تو آسوبں ہے تو هیبں خبک پس کہبں‬ .

You're Reading a Free Preview

تحميل
scribd
/*********** DO NOT ALTER ANYTHING BELOW THIS LINE ! ************/ var s_code=s.t();if(s_code)document.write(s_code)//-->